انجیل مقدس برائے 14 جولائی 2020

اِس پوسٹ کو دوسروں کے ساتھ شیئر کریں۔

اَے کورزیؔن ، بیت صیدؔا اَور کفرنحوؔم تجھ پر افسوس

انجیل ِ مقدس بمُطابق مقدس متی 11: 20 -24

اُس وقت وہ اُن شہروں کو ملامت کرنے لگا جن میں اُس کے معجزے ظاہر ہوئے  تھے۔ کیونکہ اُنہوں نے توبہ نہ کی۔ اَے کورزیؔن  تجھ پر افسوس! اَے بیت صیدؔا تجھ پر افسوس! کیونکہ یہ معجزے جو تم میں کئے گئے۔ اگر صوؔر اَور صیدؔون میں کئے جاتے تو وہ ٹاٹ اوڑھ کر اَور خاک میں بیٹھ کر کب کی توبہ کرلیتے۔ پس میَں تم سے سچ کہتا ہُوں کہ صُوؔر اَور صیدؔون  کا حال عدالت کے دِن تمہارے حال سے زیادہ قابل ِ برداشت ہوگا۔ اَور اَے کفرنحوؔم کیا تو آسمان سے بلند کیا جائے گا؟ تو عالم ِ اسفل میں اُترے گا۔ کیونکہ یہ معجزے جو تجھ میں کئے گئے ۔ اگر سَدوؔم میں کئے جاتے تو وہ آج تک قائم رہتا ۔ لیکن میں تجھ سے کہتا ہوں کہ عدالت کے دِن سَدوؔم کے ملک کا حال تیرے حال سے زیادہ قابل ِ برداشت ہوگا۔

غوروخوض

خُداوند یسوؔع مسیح تین شہروں یعنی کورزؔین ، بیت صیؔدا اَور کفرنحوؔم کو ملامت کرتے اَور اِن شہر وں پر افسوس کا اظہار کرتے ہیں۔ یہ تینوں شہر گلیؔل کی جھیل کے آس پاس تھے۔ یہ شہر یہودی آبادیاں تھیں۔ اِس کے برعکس گلیلؔ کی جھیل کے ارد گرد غیر قومیں بھی آباد تھیں۔ اِس حصے کو غیر قوموں کا گلیلؔ کہا جا تھا( اشعیا 9: 1)۔

مذکورہ تین شہروں میں خُداوند یسوؔع مسیح کے معجزات اَور منادی کے باوجود لوگوں نے توبہ نہ کی۔ بلکہ اپنی روش پر قائم رہےَ۔ اِس لئے خُداوند یسوؔع مسیح اِن کے باشندوںکو یاد دلاتے ہیں کہ اگر یہی معجزے صوؔر، صیَدوؔن اَور سَدوؔم میں کئے جاتے تو اِن کے باشندے ٹاٹ اوڑھ کر خاک میں بیٹھ کر توبہ کرتے ۔ ٹاٹ اوڑھنا اَور خاک میں بیٹھنا اپنے گناہوں پر پشیمان ہونے اَور توبہ کرنے کا طریقہ تھا۔

خُداوند فرماتے ہیں کہ صوؔر، صیدؔون کا حال قابل ِ برداشت ہوگا۔ کیونکہ وہاں نہ معجزے دکھائے گئے اَور نہ توبہ کی دعوت دی گئی۔ صوؔر اَور صیدؔون بحیرہ رومؔ کے ساحل پر دو بندرگاہیں تھیں۔صوؔر فینیکے کا درالخلافہ تھا۔ اِس کے بارے میں حزقیال نبی نے پیشنگوئی کی تھی کہ یہ شہر اُجڑ جائے گا اَور اِس جگہ ماہی گیر اپنا جال سوکھایا کریں گے( حزقیال 26: 5، 14)۔ صوؔر کو اپنے حُسن پر ناز تھا( حزقیال 27: 4)۔صیدوؔن بھی اِسی قسم کا شہر تھا۔ جو تباہ ہوگیا۔

کفرنحومؔ خُداوند یسوؔع مسیح کے زمانے میں کافی بڑا شہر تھا۔ کفرنحومؔ میں خُداوند یسوؔع مسیح نے بہت سے معجزے دکھائے مثلاً صوبیدار کے غلام کو شفادی ( مقدس متی 8: 5-13)، مفلوج کو شفادی ( مقدس مرقس 2: 1۔13) ،سررشتہ دار کے بیٹے کو اچھا کیا( مقدس یوحنا 4: 46 ۔ 56)۔کفرنحومؔ اپنی بلند و بالا عمارتوں پر فخر کرتا تھا۔ خُداوند نے اِس کے بارے میں بھی پیشنگوئی کی کہ “تو عالم اسفل میں اُترے گا” ۔ یہ پیشنگوئی حرف بہ حرف پوری ہوئی ۔ یہ شہر مکمل طور پر صفحہ ہستی سے مٹ چکا ہےَ۔ اَب اِس شہر کے کھنڈرات پانی کی تہہ کے نیچے ہیں۔

خُداوند یسوؔع مسیح کفرنحومؔ پر بھی افسوس کرتے ہوئے کہتے ہیں کہ اگر یہی معجزے سَدوؔم میں کئے جاتے تو وہ آج تک زمین پر قائم رہتا۔ سَدومؔ بحیرہ مُردار کے جنوب میں واقع تھا۔ ابراہیمؔ کا بھتیجا لوؔط یہاں سکونت پذیر تھا۔ یہ اپنی بدکاری کی وجہ سے تباہ ہوگیا۔ اِس کے کھنڈرات بھی زیرِ آب آچکے ہیں۔

کورزینؔ، بیت صیدؔا اَور کفرنحومؔ کی طرح ہماری زندگیوں میں بھی خُدا کے کلام کی منادی کی جاتی ہےَ۔ اَور خُدا ہمیں بھی اپنی قدرت کے نشانات دکھاتا ہےَ۔ لیکن جب ہم خُدا کی قدرت کے نشانات کو پہچان کر خُدا کی طرف راغب نہیں ہوتے۔ اپنے گناہوں سے توبہ نہیں کرتے۔ اپنی روش تبدیل نہیں کرتے۔ تو خُداوند ہماری حالت پر بھی افسوس کا اظہار کرتے ہیں۔ کیا کبھی ہم نے غور کیا کہ کورونا وائرس کی وبا ہمارے لئے قدرت کی طرف سے ایک نشان اَور پیغام ہےَ۔

دُنیا میں ایک کروڑ  ستائیس لاکھ سے زائد لوگ کورونا وائرس کا شکار ہوچکے ہیں۔ اَور پانچ لاکھ چھیاسٹھ ہزار لقمہِ اجل بن چکے ہیں۔ کیا کبھی ہم نے  خُدا کا شکرادا کیا  کہ اُس نے ہمیں  ابھی تک اِس وبا سے محفوظ رکھا۔ اَور ہمیں توبہ کرنے کا ایک موقعہ فراہم کیا ہےَ۔ وہ جو اِس بیماری  سے صحت یاب ہوئے ہیں۔ اَور صحت بحال ہونے سے خُدا نے اُن کو نئی  زندگی دی  ہےَ۔ کیا اُنہوں نے کبھی خُدا کا شکر ادا کیا کہ خُداوند تو نے ہمیں زندگی گزارنے کا ایک نیا موقعہ دیا ہےَ۔ اگر کورزینؔ، بیت صیؔدا اَور کفرنحومؔ کی طرح ہم نے بھی خُداوند کے پیغام اَور موقعہ کو نظرانداز کیا۔ تو ہمارا حال بھی قابل برداشت نہیں ہوگا۔اِس لئے آئیں اِس موقعہ کو غنیمت جان کر فائدہ اُٹھائیں۔

Read Previous

مکاشفہ کی کتاب کا مطالعہ آٹھویں قسط

Read Next

پرستش اَور تعظیم میں فرق کیا ہےَ؟

error: Content is protected !!